اہم سوالات کے جوابا...
 
Share:
Notifications
Clear all

[Sticky] اہم سوالات کے جوابات

 

Syed Ubaid ur Rehman
(@ubaidjilani)
Estimable Member Registered
Joined: 2 years ago
Posts: 101
Topic starter  

بسم اللہ الرحمن الرحیم

جناب الفقررحمت من اللہ کی بارگاہِ اقدس میں ہاتھ جوڑ کر عرض خدمت ہوں کہ جو سوالات کا سلسہ شروع ہوا تھا اسکو مزید آسان اور ترتیب دینے کیلئے یہ سلسہ شروع کیا ہے۔

 

الحمد اللہ ثم الحمداللہ ہم خوش نصیب ہیں کہ جن کے درمیان وہ ہستی پاک موجود ہیں جن کا نام الفقرمحمد یعقوب اعوان رحمت من اللہ ہے۔ جو کہ الفقر کے مقام پر فائز ہیں اور موجودہ دور میں دین اسلام میں جو چیزیں درست نہیں ہیں یا جن چیزوں میں دانستہ یا غیر دانستہ طور پر علماء کرام یا دین دار لوگوں سے رد بدل ہوا یا کیا گیا ان سب کو اللہ پاک کے فضل و کرم سے درستگی فرمانے اور امت محمدﷺ کو صحیح  سمت دیکھانے کیلئے آئے ہیں۔ تو آئیے سوالات اور جوابات کے سلسہ کو شروع کرتے ہیں

جس میں ون بائی ون سوالات اور انکے جوابات جناب الفقر محمد یعقوب اعوان رحمت من اللہ دیں گے ان شاء اللہ العظیم۔

اورامید ہے کہ اس بات کو بھی مدع نظر رکھا جائے گا کہ یہ صرف اور صرف سوالات اور انکے جوابات ہیں۔ یہ اللہ اور اسکے رسولﷺ کیلئے ہیں تاکہ اگر کسی قسم کی غلطی یا اڈیشن ہوئی ہے تو اس پر سمجھا اور سمجھایا جائے اور اس پر نظر فرمائی جائے۔ جس کا مطلب ہرگز ہرگز کسی کی توحین یا ذاتیات یا دل آزاری نہیں ہے۔۔

نیز یہ کہ اس سوالات و جوابات کے پورشن میں صرف سوالات اور جوابات ہی ہوں گے، کوئی اور بات کرنے کی ہرگز ہرگز اجازت نہیں۔ تحمل اورادب سے سوالات کریں اورتحمل اور ادب سے جوابات کا انتظار فرمائیں۔

دعا گو 

عبیدالرحمٰن جیلانی


Syed Ubaid ur Rehman
(@ubaidjilani)
Estimable Member Registered
Joined: 2 years ago
Posts: 101
Topic starter  

بسم اللہ الرحمٰن الرحیم

سوال ۔1:  الفقر کون ہوتے ہیں قرآن اور حدیث کی روشنی میں تفصیل سے بتائیں؟

-----------------------------------------------------------------

جواب ۔ 

الفقر اللہ کے محتاج ہوتے ہیں ، سورۃ الفاطر آیت 15 میں اللہ کریم نے فرمایا ۔ ۞ يَا أَيُّهَا النَّاسُ أَنتُمُ الْفُقَرَاءُ إِلَى اللَّهِ ۖ وَاللَّهُ هُوَ الْغَنِيُّ الْحَمِيدُ (15

ترجمہ : اے مخلوقات! تم سب (ہماری ذات)اللّٰه ہی کے محتاج اور ہماری ذات اللّٰه بے نیاز ساری خوبیوں سراہی ہے.
واضح رہے کہ یہ اللہ کریم فرما رہے ہیں ، کہ تم سب ہمارے محتاج ہو ۔ یہ بندہ نہیں پکار رہا کہ میں تیرا فقیر ہوں ۔ دونوں میں فرق ہے 

یہ وہ لوگ ہیں جنہیں اللہ نے الفقر فرمایا ہے ۔ 

تمام مخلوقات اللہ ہی کی محتاج ہے کسی نہ کسی حوالے سے ، لیکن جن کا تعلق براہ راست اس نور سے لگ جاتا ہے جو کہ اللہ ذات نے اپنی پہچان کے لئے فاطر فرمایا، وہ اللہ ذات کے مقربین کہلاتے ہیں ، الفقرپر فخر فرمانے کی وجہ یہی رہی ہے کہ وہ اس نور کا مخزن ہیں ۔ اسی لئے وہ دوسری مخلوق میں مرکزی حیثیت رکھتے ہیں اور اللہ ذات کی پہچان کے علوم کے براہ راست حاصل کرنے والے ہوتے ہیں ۔ ، اللہ ذات کے محتاج سبھی ہیں لیکن اس کی مثال اسی طرح ہے جیسے علم حاصل کرنے والا طالب علم اپنی کتابیں گھر سے مدرسہ میں لا کر استاد سے سمجھتا ہے ۔ حالانکہ کتابیں طالب علم کی ہوتی ہیں وہ گھر پر ہی کیوں نہیں پڑھ لیتا ، وہ مدرسہ آتا  ہے کسی سے سمجھنے کے لئے ۔ اسی طرح نور کا علم دینے کے لئے بھی استاد ہیں آپ کے اندر جو نور ہے وہ اس کی شناسائی آپ کو کروائیں گے اور آپ کا تعلق مضبوط بنائیں گے اسی نور سے جو اللہ نے آپ کے اندر رکھا ہے ۔ الفقر یہی ہوتے ہیں ۔ 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

عبیدالرحمٰن جیلانی


ReplyQuote
Syed Ubaid ur Rehman
(@ubaidjilani)
Estimable Member Registered
Joined: 2 years ago
Posts: 101
Topic starter  

بسم اللہ الرحمٰن الرحیم

سوال ۔2 : الفقر کی کیا ضرورت ہے  وہ کیوں معبوث کیے جاتے ہیں اور کس کی طرف سے دنیا میں بھیجے جاتے، اور  بھیجنے کا مقصد کیا؟ جبکہ خطبة حجة الوداع محمد ﷺ  میں آپﷺ نے فرمایا آج آپ کا دین مکمل ہو گیا اور میرے بعد کوئی نبی ؑ قیامت تک نہیں آئیں گے مہربانی فرما کر مکمل سوال کا جواب عنائیت فرمائیں؟

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

جواب ۔ 

الفقر کی ضرورت معاذاللہ ، اللہ کو نہیں ، مخلوقات کو ہے کیونکہ وہ اللہ کی پہچان کے علوم کا عالم ہوتے ہیں ۔ انہیں اللہ کی ذات کی پہچان اور اسی کی شانوں کی پہچان مخلوق کو کروانے کے لئے علوم دئیے جاتے ہیں ، واضح رہے کہ ، یہ محمد رسول اللہ صل اللہ علیہ و آلہ و سلم کی نبوت و رسالت کے بعد.. اللہ کے نبی ، یا رسول نہیں ہرگز نہیں ہوتے ۔ یہ امتی ہیں محمد رسول اللہ صل اللہ علیہ وآلہ وسلم کے ۔ اور ان کا سارا تعلق محمد رسول اللہ صل اللہ علیہ وآلہ وسلم کی شریعت کے مطابق ہوتا ہے ۔ 

سرکار صل اللہ علیہ وآلہ وسلم نے جوخطبہ حجۃ الوداع میں فرمایا کہ دین مکمل ہو چکا ہے ، اس پر مکمل بیانات ہمارے موجود ہیں وہ ملاحظہ فرمائیں ۔ کیونکہ نہ تو اس خطبہ کے بعد نزول قرآن کا سلسلہ بند ہوا اور نہ ہی احادیث نبوی ﷺ ۔ کا اس لئے ہمیں دوبارہ سے سمجھنے کی ضرورت ہے کہ وہ جو سرکارﷺ نے فرمایا تھا کہ دین مکمل ہو چکا ہے وہ دراصل ہے کیا ۔ کیونکہ اس خطبہ کے بعد نازل ہونے والی آیت مبارکہ اور احادیث مبارکہ بھی دین کا حصہ ہیں ۔ 

۔

عبیدالرحمٰن جیلانی


ReplyQuote
Syed Ubaid ur Rehman
(@ubaidjilani)
Estimable Member Registered
Joined: 2 years ago
Posts: 101
Topic starter  

بسم اللہ الرحمٰن الرحیم

سوال ۔3: الفقر کا مقام کیا ہے اور ان کی کتنی اقسام ہیں ؟ یہ سلسہ کب سے شروع ہوا ،اور قیامت تک کیا یہ سلسہ جاری رہے گا قرآن اور حدیث کی روشنی میں سمجھائیں؟

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

جواب ۔ 

اللہ کے محتاج ہونے کے ناطے سے ساری مخلوقات اللہ کی الفقر ہیں محتاج ہیں ۔ لیکن دیکھنا تو یہ ہے کہ الفقر کہلانے کے لائق کون ہے کیونکہ جو اللہ ذات کو لاشریک نہ رکھے ، الغیب نہ سمجھے ، اس ذات کے احد ہونے کے علوم سے شناسائی نہ رکھے ، اسے وہ نور جو پہچان کا ہے میسر نہ ہو ، اور اسی طرح ایک اتنا بڑا اللہ کی عطاؤں کا سمندر ہے جو کہ یہاں لکھنا ممکن ہی نہیں وہ سب میسر نہ ہو حاصل ، تسلیم و قبول نہ کیا ہو اللہ ذات سے ، تو وہ کس طرح سے الفقر کہلا سکتے ہیں ، الفقر اپنے نام کے ساتھ لکھنے سے صرف یہ معاملہ حل نہیں ہو گا ۔ سب سے مستند کلام اللہ کا ہے اس کائنات میں ، اس کلام سے اس کے نور سے تعلق کتنا ہے یہ بھی ضروری ہے الفقر ہونے کے لئے ، الفقر کا سلسلہ محمد ﷺ سے شروع ہوا اور پھر انہی کی امت میں ہے ، علماء ربانی کی صورت میں ، 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

عبیدالرحمٰن جیلانی


ReplyQuote
Syed Ubaid ur Rehman
(@ubaidjilani)
Estimable Member Registered
Joined: 2 years ago
Posts: 101
Topic starter  

بسم اللہ الرحمٰن الرحیم

سوال ۔4: سنا ہے  ہر صدی میں دین بکھر جاتا ہے جس میں بدعات آ جاتی ہیں ان کو درست کرنے کیلئے اللہ اور اسکے رسول ﷺ کی طرف سے ایک مجدد یا ولی بنا کر بھیجا جاتا ہے، جیسے پیر مہر علیؒ، سید عثمان علی ہجویری، امام احمد رضا خان ؒ، جیسے امام غزالی ؒ، لوگوں کا تو کہنا ہے رواں صدی کے مجدد ڈاکٹر طاہر القادری ہیں۔ جو قرآن اور سنت کو دوبارہ سے درست اور ایک جگہ پر یکجا کرتا ہے کیا یہ درست ہے؟،

مجدد اور الفقر میں کیا فرق ہے؟

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

جواب ۔ 

ہم نے بھی سنا ہے کہ ہر صدی میں مجدد تشریف لاتے ہیں ، ہر ایک کے چاہنے والے اسے مجدد سمجھتے ہیں ، جیسا کہ اوپر آپ نے کئی نام فرمائے ، لیکن کثیر تعداد میں لوگ انہیں یہ نہیں سمجھتے ، فیصلہ کون کرے گا ۔ ؟ ، فیصلہ قرآن کرے گا ۔ ترجمہ و تفسیر کرے گی ۔ 

لیکن جس ترجمہ میں بھلے نادانستگی میں بھی ، اللہ کا نائب ، ملائکہ کی بے ادبی ، انبیاء کی بے ادبی  اور اللہ کی مثال دی گئی ہو وہ ہماری نظر میں وہ درجہ نہیں رکھتا جو ایک دین کے مجدد کا ہوتا ہے ۔ ہر ایک کا اپنا معیار ہے ۔ 

الفقر وہی لوگ ہیں جو دین اسلام کو زندگی  دیتے ہیں ۔ اس کی خاص وجہ یہ ہے کہ انکا تعلق اس نور سے ہوتا ہے جو ہمیشہ زندگی کی علامت ہے ۔ 

عبیدالرحمٰن جیلانی


ReplyQuote
Syed Ubaid ur Rehman
(@ubaidjilani)
Estimable Member Registered
Joined: 2 years ago
Posts: 101
Topic starter  

بسم اللہ الرحمٰن الرحیم

سوال ۔5: کلمہ لا الہ الا اللہ محمد رسول اللہ کو جس  طرح آپؒ نےپڑھنے کا  طریقہ بتایا ویسے باقی امت کیوں نہیں پڑھتی ہے؟

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

جواب ۔ 

کلمہ ساری امت بشمول ہمارے ایک ہی طرح اور ایک ہی پڑھتے ہیں ۔ ، 

فرق اسم اللہ کو واضح پڑھنے کا ہے ۔ اور کچھ نہیں ۔ 

اسم اللہ کو اللہ پڑھنا چاہئے اس لئے کہ یہ اسم ہے کوئی لفظ نہیں ۔ کسی بھی لغت میں اللہ کے اسم کو بگاڑنے کی اجازت نہیں ، نہ تحریف کر کے کوئی حصہ حضف کرنے کی ۔ 

لوگ کیوں پڑھتے ہیں کیونکہ انہیں لفظ اور اسم کی سمجھ نہیں ۔ ، ہم وہ سمجھ دے رہے ہیں لوگوں کو اللہ سکھا رہے ہیں ، ان شاء اللہ سیکھ بھی جائیں گے ۔ ابھی تو سات ارب لوگوں نے مکمل کلمہ نہیں پڑھ لیا ۔ ابھی تو دین پھیل رہا ہے ، مکمل تو نہیں پھیل گیا ۔ ابھی تو بہت کام باقی ہے ۔ آپ لوگ اپنے دائرے سے باہر بھی دیکھیں ابھی اسلام دنیا میں پہلے نمبر پر مانا جانے والا دین نہیں بنا ، ابھی تو ہمیں بہت محنت کی ضرورت ہے ، درستگی کی ضرورت ہے ۔ 

عبیدالرحمٰن جیلانی


ReplyQuote
Syed Ubaid ur Rehman
(@ubaidjilani)
Estimable Member Registered
Joined: 2 years ago
Posts: 101
Topic starter  

بسم اللہ الرحمٰن الرحیم

سوال ۔6: جو لوگ آپؒ کے بتائے گئے طریقے سے پہلےکلمہ پڑھتے رہے ہیں ان میں سے کافی اللہ کے ولی اور اولیاء گزرے ہیں کیا وہ سب غلط تھے اور انکے مریدین بھی غلط ہیں ،پوری دنیا کے اولیاء کرام معاذاللہ غلط تھے یا ہیں۔ کیونکہ ہر دور میں اللہ کے نیک اور ولی موجود ہوتے ہیں۔ تو کیا سبھی غلط کلمہ پڑھتے ہیں یا پڑھتے رہے ہیں؟

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

جواب ۔ 

غلط اور سہی کی بات کرنا ہی غلط ہے ۔ کہ ہم درست اور دوسرے غلط ۔ دیکھنا تو یہ ہے کہ اللہ کو اللہ کون پکارتا ہے ۔ ، اگر سب اولیاء کو ایک ہی علم ملتا ہے اور سب کا تعلق ایک ہی ہوتا ہے تو پھر شریعت محمدی ﷺ میں چار یا پانچ امامین کی فقہ کیوں رائج ہے ۔ کیا کسی کا کوئی تعلق نبی اکرم ﷺ کی بارگاہ اقدس تک نہیں کہ فقہ ہی دین کی ایک ہو جاتی ۔ ، میں درست باقی سب غلط کا رواج عام ہے اسی کی وجہ سے سارے مسائل ہیں ۔ ہمیں یہ دیکھنا چاہئے کہ وجہ کیا ہے ، ہم یہ دیکھتے ہیں کہ یہ ہماری بات کیوں نہیں مانتا ، یہ اپنی کیوں منواتا ہے ۔ ہم سوائے اس کے کہ اللہ کو اللہ پکارو اور کچھ نہیں کہتے ۔ 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

سوال ۔7: کیا ان میں سے کسی کا رابطہ (بارگاہ اقدسﷺ میں حاضری)اور تعلق
سیدنا محمدمصطفیٰﷺ کی ذات سے نہیں تھا۔ جو انکی درستگی فرمائی جاتی ؟

۔ جواب ۔ 

سب کا اپنا اپنا تعلق ہے ۔ اس کی سمجھ اسے ہی آتی ہے جس کا تعلق ہے ۔ دوسرے کو سمجھانا اس لئے مشکل ہے کیونکہ وہ ابھی اس سے خالی ہے ، اور تعلق کے بجائے امتحان لے رہا ہے ۔ ایک ہی ملے گا ۔ ہم ہر ایک سے اسکی طلب کے مطابق معاملات رکھتے ہیں ۔  

عبیدالرحمٰن جیلانی


ReplyQuote
Syed Ubaid ur Rehman
(@ubaidjilani)
Estimable Member Registered
Joined: 2 years ago
Posts: 101
Topic starter  

بسم اللہ الرحمٰن الرحیم

سوال ۔8:    آپ نے فرمایا اسم اللہ کو واضح  کر کے پڑھنا درست ہے ملا کر پڑھنا درست نہیں ۔۔باللہ،الَّا اللہ، رسول اللہ،حسبی اللہ،استغفراللہ ، معاذاللہ ،ان شاء اللہ  جیسے الفاظ کو جدا جدا پڑھنا درست ہے ملا کرپڑھنا درست نہیں ہے ۔ ملا کر پڑھنے سے کیا ہوتا ہے۔۔۔( بِ-اَللہ)(رسولُ-اَللہ)(حسبیَّ-اَللہ)(استغفرُ-اَللہ) جیسے الفاظ کو ملا کر پڑھنے سے کیا ہوتا ہے؟

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

جواب ۔ 

ملا کر پڑھنے سے اللہ کو واضح اللہ نہیں پڑھا اور پکارا جاتا ، چونکہ اسم اللہ نور ہے مکمل نہ پڑھنے سے وہ نور نہیں ملتا ، جب نور نہیں ملتا پھر انسان کو وہ فائدہ نہیں ہوتا جو اس کو ہونا چاہئے ، اسی وجہ سے اس کی دعائیں قبول نہیں ہوتیں ، اس میں تبدیلی نہیں آتی ۔ ، اور اس بات پر بھی غور فرمائیں کہ جہاں بھی بگاڑا جاتا ہے اسم اللہ ہی بگاڑا جاتا ہے اور کوئی دوسرا نام کیوں نہیں ، ، 

عبیدالرحمٰن جیلانی


ReplyQuote
Syed Ubaid ur Rehman
(@ubaidjilani)
Estimable Member Registered
Joined: 2 years ago
Posts: 101
Topic starter  

بسم اللہ الرحمٰن الرحیم

سوال ۔9: اگر زیر زبر قرآن پاک کو حجازبن یوسف  کے دور میں لگائی گئی تھیں تو کیا انہوں نے غلط لگوائی تھیں بلکہ زیر زبر علماء کرام اور حفاظ کرام نے لگائی لیکن دور حجاز بن یوسف کا تھا ، جبکہ اللہ کریم نے قرآن پاک کی زیرزبر کی حفاظت کا ذمہ خود لیا اور اتنا عرصہ جو لوگ پڑھتے رہے وہ غلط پڑھتےرہے معاذ اللہ ،استغفراللہ، اللہ پاک کہیں چھٹیوں پر  چلے گئے تھے جب واپس آئے تو کلمہ سمیت سارے قرآن میں تحریف دیکھی تو انہوں نے آپ الفقر ؒ کو بھیجا  کہ یعقوب جائیں جا کر درستگی فرمائیں لوگوں نے تو ترجمہ بھی غلط لکھا ہے اسکی تفسیریں بھی  غلط لکھی ہیں، انکی درسگاہیں جہاں تعلیم فرمائی جاتی ہے وہ بھی غلط ہو گئ ہیں، دنیا کے تمام اساتذہ کرام بھی غلط ہو گئے ہیں1.8بلین مسلم جن کی 49 ممالک میں میجاریٹی ہے سب غلط ہیں اور یہود و نصریٰ کی پیروی کر رہے ہیں ؟

۔۔۔۔۔۔۔

جواب ۔ 

اس سوال میں ادب نہیں ہے ۔ سوال کرنے سے پہلے ادب کا خیال رکھیں ۔ ۔

۔ اللہ کریم نے قرآن الکریم کی حفاظت کا ذمہ فرمایا ہے ۔ اور جب قرآن الکریم نازل فرمایا گیا تب تو نقطے بھی نہیں تھے ۔ زیر زبر اور پیش تو بعد کی بات ہے ۔ 

اس لئے زیر زبر پیش کی حفاظت کو بنیادی قرآن سے اور حفاظت سے نہ جوڑیں ۔ شکریہ ۔ 

اگر پہلا ترجمہ و تفسیر ہی مکمل تھا تو پھر دوسرا ، تیسرا ، حتہ کہ چالیس سے زائد کیوں لکھے گئے ، حتہ کہ ایک ہی مدرسہ میں پڑھنے والے طلبہ نے الگ الگ تفسیر و ترجمہ کیوں کیا ۔ اور پھر انکے ہی مسلک پر رہنے والے لوگوں نے دوبارہ الگ ترجمہ و تفسیر کیوں کیا ۔ ؟ 

وجہ یہ ہے کہ ایک ترجمہ و تفسیر کو کبھی بھی مستند سو فیصد نہیں مانا جا سکتا اس لئے کہ یہ الہامی خدائی زبان میں ہے کلام پاک ہے اس کو کبھی بھی کسی بھی انسان پر ختم نہیں سمجھا جا سکتا ۔ جسکا جتنا تعلق محمد ﷺ سے ہو گا وہ اتنا ہی ترجمہ و تفسیر کر سکے گا ۔ دیکھنا تو یہ ہے کہ تعلق کس کا ہے اور کتنا ہے ۔ وہ اس کے ترجمہ و تفسیر سے واضح ہو گا ۔ 

 

عبیدالرحمٰن جیلانی


ReplyQuote
Syed Ubaid ur Rehman
(@ubaidjilani)
Estimable Member Registered
Joined: 2 years ago
Posts: 101
Topic starter  

بسم اللہ الرحمٰن الرحیم

سوال ۔10: الا اور الّا کا جو قانون آپ نے فرمایا، آج تک کسی نے نہیں فرمایا، اتنا لغت کے اساتذہ کرام گزرے،اللہ کے ولی، گزرے کوئی ایک تو درستگی فرما دیتا۔۔ یعنی سارے کے سارے غلط ہیں اور  سارے دوزخ میں جائیں گے؟

اگر ساری درسگاہیں اور اساتذہ غلط ہیں ، تو ان حفاظ کرام کے بارے میں کیا خیال ہے جن کے سینوں میں قرآن پاک حضورﷺ کے دور سے محضوظ ہے اور سینہ بہ سینہ دوسری نسلوں میں منتقل ہوتا رہا ہے۔اور کلمہ شریف بھی تو کیا یہ سب معاذاللہ غلط ہیں؟

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

جواب ۔ 

الا اور الا کا قانون اسی کو سمجھ میں آئے گا جسے اللہ ذات اور اسم اللہ کی سمجھ ہو گی ۔ ہم سے پہلے کتنوں نے یہ فرق بتایا ہے ۔ انکے اسماء مبارکہ ہمیں بتائیں ۔ 

اللہ کے ولی جو گزرے وہ درستگی کرتے رہے ۔ کسی نے دھیان ہی نہیں دیا ۔ جیسا کہ اس وقت ہو رہا ہے ۔ آج سے سو سال بعد شاید پھر کوئی سمجھانے آ جائے اسے بھی اسی طرح کہا جائے گا تم سے پہلے کوئی نہیں تھا ۔ ہمیں قرآن الکریم فرماتا ہے کہ تم سے پچھلوں یا پچھلی امتوں کے بارے میں نہیں تمہارے بارے میں سوال کیا جائے گا ۔ یہ کیوں فرمایا گیا ، ؟ اسی لئے کہ ہمیں اپنے آپ کو دیکھنا ہے ہم سے پچھلوں کو نہیں ۔ اگر بات قرآن کے بنیادی اصولوں کے منافی نہیں تو اللہ کو اللہ پکارنے میں حرج کیا ہے ۔ اور اللہ کو اللہ واضح پکارنے سے اتنی پریشانی کیا ہے ۔ جن نسلوں اور حفاظ کرام کی آپ بات فرما رہے ہیں ان میں سمجھ والے اگر زیادہ ہوتے ہیں تو قرآن میں سمجھ والوں کو ہمیشہ کم ہی کیوں فرمایا گیا ہے ۔ اور بار بار غور و فکر کرنے کے لئے کیوں فرمایا جا رہا ہے ۔ 

 

عبیدالرحمٰن جیلانی


ReplyQuote
Syed Ubaid ur Rehman
(@ubaidjilani)
Estimable Member Registered
Joined: 2 years ago
Posts: 101
Topic starter  

بہت بہت شکریہ یا الفقر رحمت من اللہ
میرا اور کوئی سوال باقی نہیں ہے. سب خیر ہے. الحمد للہ

سوالات میں بے ادبی کیلئے اللہ اور الفقر رحمت من اللہ کی بارگاہ اقدس میں معافی اور توبہ کا طالب ہوں .

جزاک اللہ خیرا الجزء

آپ سلامت رہیں
آپ ہی حق اور سچ ہیں

عبیدالرحمٰن جیلانی


ReplyQuote
Alfaqr Muhammad Yaqoob Awan
(@alfaqr_muhammad)
Illustrious Member Admin
Joined: 2 years ago
Posts: 113
 

@ubaidjilani

آپ کی خدمت کے لئے ان شاء اللہ موجود ہیں ۔ 

جذاک اللہ خیرا بالکثیر ۔ 

 

آلفقر محمد


ReplyQuote
Syed Ubaid ur Rehman
(@ubaidjilani)
Estimable Member Registered
Joined: 2 years ago
Posts: 101
Topic starter  

السلام علیکم رحمت اللّٰه وبركاته یا الفقر رحمت من اللہ

بہت ادب اور ہاتھ جوڑ کر التجا ہے کہ سوال نمبر ایک میں جو قرآن الکریم کی آیت بیان کی گئی ہے اسکا ترجمہ بھی عنایت فرمایا جائے تاکہ آسانی سے مطلب کا پتہ چل سکے.

بے ادبی کیلئے معذرت خواہ ہوں اور طالبِ معافی ہوں.
یا الفقر آپ ہمیشہ سلامت رہیں

---------------------- 

 

وعلیکم السلام رحمت الله وبركاته 

اس آیت مباركه کا ترجمہ و تفسیر ہماری کتاب تعارف الفقر کے موضوع قلب کے بعد سب سے پہلا موضوع ہے، اسی ویب سائٹ پر ملاحظہ فرمائیں آن لائن موجود ہے

 

https://alfaqr.com/books/tarufalfaqr/  

 

 

عبیدالرحمٰن جیلانی


ReplyQuote
Syed Ubaid ur Rehman
(@ubaidjilani)
Estimable Member Registered
Joined: 2 years ago
Posts: 101
Topic starter  

السلام علیکم رحمت اللّٰه وبركاته 

یا الفقر بھائی جان کل کے خطاب میں ایک آیت کا حوالہ دیا گیا جس کا مطلب سمجھنا مقصود ہے

یٰٓــاَیـُّـہَا الَّذِیْنَ اٰمَنُوْا لاَ تَقُوْلُوْا رَاعِنَا

ترجمہ

اے ایمان والو تم «رَاعِنَا» مت کہا کرو

 اسكا كيا مطلب اور معني هے

جزاک اللہ خیرا الجزء

 - - - - - - - - - - - - -

جواب 

وعلیکم السلام رحمت الله وبركاته 

عام طور پر راعنا سے مراد ہے کہ ہمارے چرواہے،

لیکن قرآن الحکیم کے مطابق ہم اس ترجمہ سے متعلق مکمل متفق نہیں ہیں کیونکہ اپنی جانیں نثار کرنے والے صحابہ کرام رضوان اللہ علیہم اجمعین امام المحبوبین محمد صل اللہ علیہ و آلہ و سلم کو معاذاللہ اللہ ہمارے چرواہے کہہ کر پکاریں یہ بھی بات سمجھ میں نہیں آتی، 

پھر ہم اسی نتیجہ پر پہنچے کہ اسم پاک کے علاوہ کوئی اسم لیا ہو گا، جو کہ نبی کے شایانِ شان نہیں سمجھا جاتا،

دراصل بنیادی طور پر یہاں اللہ اور اللہ کے رسول کو پکارنا سکھایا جا رہا ہے کہ حوش سے پکاریں اس کو عرف عام سمجھ کر اسماء نہ بگاڑو 

اور دراصل اس آیت مبارکہ میں خاص طور پر مومنین کو مخاطب فرمانا بہت ہی بڑی حکمت ہے کہ بظاہر آپ لوگوں جیسے نظر آنے والے دراصل آپ لوگوں جیسے نہیں ہوتے، انکا مقام الگ ہے، اور پھر اسی آیت کے آخری حصے میں اس ادب کے نہ ماننے والوں کے لیے دردناک عذاب بھی ہے، یعنی مومنین ہی کو فرمایا گیا ہے کہ ایمان اسی وقت قبول ہے اگر ادب ہے، 

 

اس آیت کی مکمل تفصیلات بإذن الله العظيم سورہ البقرہ کی تفسیر میں بیان کریں گے،

 

جذاك الله خير الجزاء 

عبیدالرحمٰن جیلانی


Syed Ubaid ur Rehman
(@ubaidjilani)
Estimable Member Registered
Joined: 2 years ago
Posts: 101
Topic starter  

السلام علیکم رحمت اللہ و برکاتہ یا الفقر رحمت من اللہ 

اللهم صل وسلم علی سيدنا ونبينا وحبيبنا شفيعنا کریمنا محبوبنا قلوبنا محمد و علی آلہ و اصحبه اجمعین و بارك وسلم 

عبیدالرحمٰن جیلانی


Alfaqr Muhammad Yaqoob Awan
(@alfaqr_muhammad)
Illustrious Member Admin
Joined: 2 years ago
Posts: 113
 

@ubaidjilani

 

وعلیکم السلام رحمت الله وبركاته 

 

آلفقر محمد


ReplyQuote
Share:
Spread the love
Don`t copy text!
Alfaqr

FREE
VIEW